AskAhmadiyyat

آنحضرت ﷺ کی توہین کا الزام

حضرت مسیح موعود ؑ کی مندرجہ ذیل عبارت  الزام لگایا جاتا ہے کہ اس میں حدیث کی توہین کی گئی ہے اور یہ اصول حدیث خود ساختہ ہے ۔’’ میرے اِس دعویٰ کی حدیث بنیاد نہیں بلکہ قرآن اور وہ وحی ہے جو میرے پر نازل ہوئی۔ ہاں تائیدی طور پر ہم وہ حدیثیں بھی پیش کرتے ہیں جو قرآن شریف کے مطابق ہیں اور میری وحی کے معارض نہیں۔ اور دوسری حدیثوں کو ہم ردّی کی طرح پھینک دیتے ہیں۔ ‘‘ (اعجاز احمدی ضمیمہ نزول المسیح۔روحانی خزائن جلد 19ص140)

حضرت مرزا بشیر احمد صاحبؓ کی کتاب کلمۃ الفصل سے درج ذیل اقتباس  پر اعتراض ہوتا ہے کہ نعوذباللہ انہوں نے حضرت مسیح موعود ؑ کو نبی کریم ﷺ کے برابر درجہ دے دیا ہے ۔’’ہر ایک نبی کو اپنی استعداد اور کام کے مطابق کمالات عطا ہوتے تھے، کسی کو بہت کسی کو کم مگر مسیح موعودکو تو تب نبوت ملی جب اس نے نبوت محمدیہ کے تمام کمالات کو حاصل کر لیا اور اس قابل ہو گیا کہ ظلی نبی کہلائے پس ظلی نبوت نے مسیح موعودکے قدم کو پیچھے نہیں ہٹایا بلکہ آگے بڑھایا اور اس قدر آگے بڑھایا کہ نبی کریم ؐ کے پہلو بہ پہلو لا کھڑا کیا‘‘۔  (کلمۃ الفصل۔ صفحہ 113)

We recommend Firefox for better fonts view.

Follow by Email
Facebook
Twitter