AskAhmadiyyat

نفس اور شیطان کے خلاف جہاد

اللہ تعالیٰ قرآن کریم میں فرماتا ہے ۔

وَالَّذِیْنَ جَاہَدُوْا فِیْنَا لَنَہْدِیَنَّھُمْ سُبُلَنَا

 (العنکبوت:70)

ترجمہ:۔ اور وہ لوگ جو ہم سے ملنے کی کوشش کرتے ہیں ہم ان کو ضرور اپنے رستوں کی طرف آنے کی توفیق بخشتے ہیں۔
آنحضرت ؐ نے ایک غزوہ سے واپسی کے موقع پر فرمایا۔
”تم جہاد اصغر یعنی چھوٹے جہاد سے لوٹ کر جہاد اکبر یعنی بڑے جہاد کی طرف آئے ہو (اور جہاد اکبر) بندہ کا اپنی خواہشات کے خلاف جہاد ہے”۔

         (کنز العمال۔ کتاب الجہاد فی الجہاد الاکبر من الاعمال جلد4حدیث11260۔ مطبوعہ مکتبہ التراث الاسلامي حلب)

نفس کے خلاف جہاد اور جماعت احمدیہ

جماعت احمدیہ کے افراد اس جہادمیں بھر پور حصہ لے رہے ہیں اور دوسرے لوگوں سے آگے ہیں۔ جس کا اعتراف غیر بھی کرتے ہیں۔
١۔شاعرِ مشرق علامہ محمد اقبال لکھتے ہیں:۔
”پنجاب میں (دینی) سیرت کا ٹھیٹھ نمونہ اس جماعت کی شکل میں ظاہر ہوا”

(زندہ رود۔ صفحہ٥٧٦از ڈاکٹر جاوید اقبال)

٢۔ مقبول الرحیم مفتی روزنامہ مشرق میں لکھتے ہیں:۔
”جماعت احمدیہ کے اندر اہل، باصلاحیت اور محنتی افراد ہونے کا ایک سبب بلکہ اہم ترین سبب یہ ہے کہ انہوں نے پچھلی ایک صدی کے دوران ہر سطح پر ہر قسم کے جھگڑوں اور اختلافات سے کنارہ کشی کا راستہ اختیار کر کے اپنی جماعت اور جماعت کے افراد کی اصلاح و فلاح کے لئے منصوبہ بندی کے ساتھ کوشش و محنت کی ہے”۔

(روزنامہ مشرق۔ احمدی مسلم کشمکش کا حل مخاصمت یا مکالمہ از مقبول الرحیم مفتی 24 فروری1994ء)

٣۔ شیخ محمد اکرم صاحب ایم اے لکھتے ہیں:۔
”ان (مسلمانوں۔۔۔۔۔۔ ناقل) کے مقابلے میں احمدیہ جماعت میں غیرمعمولی مستعدی، جوش، خود اعتمادی اور باقاعدگی ہے۔ وہ سمجھتے ہیں کہ تمام دنیا کے روحانی امراض کاعلاج ان کے پاس ہے”۔

(موج کوثر۔ صفحہ192)

We recommend Firefox for better fonts view.

Follow by Email
Facebook
Twitter