AskAhmadiyyat

منسوخ نہیں ملتوی فرمایا ہے

حضرت مسیح موعود علیہ السلام نے ہرگز جہاد کو منسوخ نہیں کیابلکہ آپ نے  محض جہاد بالسیف کو اس کی شرائط پوری نہ ہونے کے باعث ملتوی کیا۔ چنانچہ اس سلسلہ میں آپؑ فرماتے ہیں:۔

’’اس بات میں کوئی شک نہیں کہ اس زمانہ میں اور اس ملک میں جہاد کی شرائط مفقود ہیں ۔۔۔۔۔۔ امن اور عافیت کے دور میں جہاد نہیں ہوسکتا‘‘

                                                                                    (تحفہ گولڑویہ۔ روحانی خزائن جلد17۔ صفحہ 82)

پھر ایک اور جگہ فرمایا :۔

            ’’اس قدر ہم ضرور کہیں گے کہ یہ دن دین کی حمایت کے لئے لڑائیؔ کے دن نہیں ہیں۔ کیونکہ ہمارے مخالفوں نے بھی کوئی حملہ اپنے دین کی اشاعت میں تلوار اور بندوق سے نہیں کیا بلکہ تقریر اور قلم اور کاغذ سے کیا ہے اِس لئے ضروری ہے کہ ہمارے حملے بھی تحریر اور تقریر تک ہی محدود ہوں جیسا کہ اسلام نے اپنے ابتدائی زمانہ میں ہی کسی قوم پر تلوار سے حملہ نہیں کیا جب تک پہلے اس قوم نے تلوار نہ اٹھائی۔ سو اِس وقت دین کی حمایت میں تلوار اٹھانا نہ صرف بے انصافی ہے بلکہ اس بات کو ظاہر کرنا ہے کہ ہم تقریر اور تحریر کے ساتھ اور دلائل شافیہ کے ساتھ دشمن کو ملزم کرنے میں کمزور ہیں۔ کیونکہ یہ جھوٹوں اور کمزوروںکا کام ہے کہ جب جواب دینے سے عاجز آ جائیں تو لڑنا شروع کر دیں۔ پس اس وقت ایسی لڑائی سے خدا تعالیٰ کے سچے اور روشن دین کو بدنام کرنا ہے۔ دیکھو کس طرح ہمارے نبی صلی اﷲ علیہ وسلم مکّہ میں تیرہ برس تک کفّار کے ہاتھ سے دُکھ اُٹھاتے رہے اور دلائل شافیہ سے اُن کو لاجواب کرتے رہے اور ہرگز تلوار نہ اٹھائی جب تک دشمنوں نے تلوار اٹھا کر بہت سے پاک لوگوں کوشہید نہ کیا۔ سو جنگ لِسَانی کے مقابل پر جنگ سِنَانی شروع کر دینا اسلام کا کام نہیں ہے کمزوروں اورکم حوصلہ لوگوںکاکام ہے۔‘‘

(ایام الصلح روحانی خزائن جلد14صفحہ283)

پس حضرت بانی جماعت احمدیہ نے جہاد بالسیف کو منسوخ قرار نہیں دیا بلکہ آنحضرتؐ کی پیشگوئی کے مطابق اس کی شرائط موجود نہ ہونے کی وجہ سے اس کے عارضی التوا کا اعلان فرمایا۔ اور یہ بھی بیان فرمایاکہ اگر جہاد بالسیف کی شرائط موجود ہوں تو پھر یہ جہاد بھی ضروری ہے۔ آپ نے واضح فرمایا

’’ہمیں یہ بھی حکم ہے کہ دشمن جس طرح ہمارے خلاف تیاری کرتا ہے ہم بھی اس کے خلاف اسی طرح تیاری کریں‘‘

(حقیقۃ المہدی۔ روحانی خزائن جلد14۔ صفحہ454)

نیز یہ قرآنی اصول بیان فرمایا کہ

’’اگر دشمن باز نہ آئیں تو تمام مومنوں پر واجب ہے کہ ان سے جنگ کریں‘‘

 (نور الحق حصہ اول۔ روحانی خزائن جلد8۔ صفحہ62)

We recommend Firefox for better fonts view.

Follow by Email
Facebook
Twitter